showcase demo picture

حسد اور ہومیوپیتھی (2) ڈاکٹر بنارس خان اعوان

مزید تبصرے
قارئین!
طالب علم کے لیے تو کتاب کی ضرورت ہمیشہ رہے گی۔
یقیناً جو ڈاکٹر حضرات اپنے مریضوں کی صحت کے لیے دل میں درد رکھتے ہیں اور ان کی صحت کے لیے تیزی سے کا میا بی چاہتے ہیں ان کو اس کتا ب کاضرور مطالعہ کرنا چائیے۔
ترجمہ کر نا یقیناً بڑا مشکل اور کٹھن مر حلہ ہوتا ہے۔یہ بڑی ریاضت اور محنت طلب کام ہے اور انجہانی فرنگٹن کے میٹریا میڈیکا کا انتہائی خوبصورت اور سلیس تر جمہ کر نے کے بعد جارج وتھالکس کی موجودہ کتاب جس کا تر جمہ ڈاکٹر صاحب نے پیش کیا ہے۔ یہ ان وڈیو لیکچرز کا مجموعہ ہے جو کہ جارج وتھالکس نے سوئٹزر لینڈ کے ایک بین الاقوامی سیمینار میں دئیے۔
اس میں مختلف ادویات کو ایسے دلچسپ انداز میں پیش کیا گیا ہے کہ مجھ جیسے کم علم رکھنے والے بھی اس کو بخوبی سمجھ سکتے ہیں۔
میں نے اس کتاب کا دل کی گہرائی سے مطالعہ کیا اور جس انداز میں ڈاکٹرمسعود یحیےٰ صاحب نے مریض کی جذباتی، ذہنی اور جسمانی خدوخال کا ذکر کیا ہے۔میں اس مہارت کے بارے میں کچھ بیان کر نے سے قاصر ہوں کیو نکہ ان کی قابلیت کو ایک صفحے میں تحریر کرنا میرے لیے مشکل ہے۔ اﷲ تعالیٰ ڈاکٹر صاحب کے قلم میں مزیدوسعت اور طاقت عطا فرما ئے۔ ڈاکٹر صاحب جیسے محنتی اور تجر بہ کار سرمایہ کی حد درجہ حوصلہ افزائی کرنی چائیے۔ ڈاکٹر صاحب کی عمر درازی کے لیے دعا گو ہوں۔
اﷲتعالیٰ ان کو صحت اور زندگی عطا فرمائے۔

ڈاکٹر محمد عمران اپل ، واہ کینٹ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روزمرہ کی پریکٹس کا ہمارا معمول ہے کہ ہم اکثر مریض کو ایک دوا دیتے ہیں اور اس کے اثرات دیکھتے ہیں، مریض رپورٹ کرتا ہے کہ مجھ پر اس دوا کا بہت اچھا اثر ہوا ہے، میں اپنے آپ کو بہتر محسوس کر رہا ہوں، ہم ایک اور دوا دیتے ہیں، مریض پھر یہی کہتا ہے کہ مجھے بہتر محسوس ہوا یہاں تک کہ تین چار یا اس سے بھی زیادہ ادویات کی پوٹنسیاں تبدیل کرتے اور دھراتے رہتے لیکن آخر انکشاف ہوتا ہے کہ مریض کے بنیادی مسائل اسی جگہ موجود ہیں، تکلیف وہاں کی وہاں ہی ہے جہاں سے ہم اسے لے کر چلے تھے وجہ۔۔۔! دراصل ہم مریض کے لیے جو ادویات تجویز کرتے رہے ان کی تجویز محض سطحی نوعیت کی تھی،چناچہ ان ادویات نے بالکل سطحی طور پر کام کیا اور کچھ تبدیلیاں لائیں لیکن اندرونی وجوہات کو چھوئے بغیرچھوڑ دیا بد قسمتی سے ہمارے بہت سے مریضوں کے ساتھ ایسا ہی ہوتاآرہا ہے،۔۔۔۔ استاد وتھالکس نے انہیں مشکلات کے لیے اپنی زندگی وقف کی ہوئی ہے۔
جارج وتھالکس کو اس وقت دنیا بھر میں ہومیوپیتھی کا بے تاج بادشاہ مانا جاتا ہے آنجہانی کینٹ کے بعد یہی وہ ہستی ہے جسے دنیا بھر کے ہومیو پیتھس نے ہومیو پیتھی کا امام مانا بلکہ ہندوستان کے ہو میو پیتھس نے اسے مہاگرو کا درجہ دے رکھا ہے وتھالکس کا طریقہ کار دوا کے مرکزی نیوکلیس کو دئکھتے ہوئے دوا کا تجویز کرنا ہے اس سلسلے میں جارج وتھالکس نے بیشمار سیمینارز کا انعقاد کیا جہاں حقیقی مریضوں کے ساتھ ادویات کے چناؤ پر ڈسکشن کی گئی، دلچسپ بات یہ ہے کہ جارج وتھالکس بذات خود ایم ڈی ڈاکٹر نہیں لیکن ان کی کلاس میں پڑھنے والے اکثر ایم ڈی ڈاکٹر ہوا کرتے ہیں جارج کا طریقہ کار بڑا انوکھا ہے وہ ہر دوا کا حقیقی کیس، اصل مریض کی لائیو مو جو دگی کے ساتھ سوالاً جواباً ڈسکس کرتے کرتے سامعین کو دوا کے نیو کلیس تک لے جاتے ہیں کہ دوا کے نقش و نگار دل و دماغ کی لوح پر پرنٹ ہو کر رہ جاتے ہیں اناسی ۷۹ء اور اسی ۸۰ء کے عشرے میں جارج کی کچھ کتب اہل دنیا کے سامنے منظر عام پر آئیں لیکن اس کے بعد ایک بریک آگیا۔۔۔۔ وتھالکس کے ان سیمینارز میں پیش ہونے والے حقیقی مریضوں کی روئیداد کی باقاعدہ وڈیو فلم بنائی جاتی ہے بعد میں ان وڈیو کیسز کو کتابی شکل دے دی جا تی ہے ابھی حال ہی میں ایک طویل عرصے کے بعد جارج کے تحقیقی ورک پر مبنی کتب کی اشاعت کا دوبارہ سلسلہ شروع ہوا ہے لیکن لٹر یچر ابھی جنوبی اشیا کے کسی اشاعتی ادارے کے پاس حقوق نہ ہونے کے باعث اس خطے خاص طور پر پاکستانی ہومیو پیتھس کی پہنچ سے قطعی باہر ہے ہومیو پیتھی کے معروف استاد ڈاکٹر بنارس خان اعوان نئے سے نئے لٹریچر کی تلاش میں سرگرداں رہتے ہیں انہوں نے وتھالکس کی کتاب جس کی آمد ابھی ہمارے ہاں نہیں ہو پائی کہیں سے پیدا کر ڈالی۔ ڈاکٹر ملک مسعود یحیی ہو میو پیتھی کے معروف استاد ہیں۔پاکستان میں جو شخص بھی ہومیوپیتھک رسائل و جرائد کے مطالعہ کا ذرا سا بھی شوق رکھتا ہے وہ ڈاکٹر صاحب کے نام کو بخوبی جانتا ہے، پہچانتا ہے۔ ڈاکٹر ملک مسعود یحیی ایک طویل عرصہ سے انگریزی ادب میں موجود ہومیو پیتھی کے بلند پایہ، نادر و نایاب علمی پاروں کو اردو کے قالب میں ڈھا لتے چلے آ رہے ہیں یہ ناقابل فراموش تحریریں پالستان کے مختلف ہومیو پیتھک رسائل و جرائد کی زینت بن چکی ہیں۔ ڈاکٹر ملک مسعود یحیی اس سے پہلے بھی وتھالکس کی ایک عالمی شہرت یافتہ کتاب اے ماڈل فار ہیلتھ اینڈ ڈزیز کا تر جمہ پیش کر چکے ہیں۔ ڈاکٹر ملک مسعود یحیی کا ایک اور علمی کارنامہ آنجہانی فرنگٹن کے میٹریا میڈیکا کا انتہائی خوبصورت اور سلیس تر جمہ ہے بلکہ مجھے کہنے کی اجازت دیں کے یہ ان کی عمر بھر کی ریاضت کا حاصل ہے۔
ڈاکٹر بنارس خان اعوان کو ہومیو پیتھی کے حلقوں میں لوگ خیبر سے لے کر کراچی تک جانتے پہچانتے ہیں، تحریر وتقریر کا انہیں بادشاہ کہا جاتا ہے کلاسیکل ہو میو پیتھی پر ان کی گرفت ہے۔ ان کے بے شمار مضامین ہومیو پیتھک جرائد میں چھپ چکے ہیں،دو عدد کتابیں بنام لیکچرز آن ہومیوپیتھی اور میرے مہمان تحریر کر چکے ہیں، جنہیں جنوبی اشیا کے معروف دوا ساز ادارے مسعود اینڈ سنز نے شائع کیا۔ پہلا ایڈشن ہاتھوں ہاتھ بک گیااور اس کا کتاب کا دوسرا ایڈشن بھی نئی آب و تاب کے ساتھ میں مارکیٹ میں آ چکا ہے، پڑ ھنے سے تعلق رکھتا ہے، موجودہ کتاب کا تر جمہ ڈاکٹر بنارس خان اعوان اور ڈاکٹر ملک مسعود یحییٰ کی مشترکہ کاوشوں کا نتیجہ ہے۔
قارئین! ترجمہ کر نا ایک مشکل اور کٹھن راہ ہے اس راہ کی مشکلات کو یہ ناچیز بخوبی سمجھتا ہے کیونکہ اس راہ پر راقم نے بھی چلنے کی کوشش کی لیکن مختصر سفر کے بعد ہی ٹہر جانا پڑا آگے چلنے کی ہمت ہی نہ ہوئی۔ یہ بڑی ریاضت اور محنت کا کام ہے مجھ جیسے کم پڑھے لکھے کو تو آپ کسی گنتی میں ہی نہ رکھیں بہت پڑھے لکھے لوگ بھی اس کام میں فیل ہیں اور یوں آپ سمجھ سکتے ہیں کہ کتاب ہذا کا تر جمہ کتنی ریاضت اور مشقت کا کام ہے۔ جارج وتھالکس کی موجودہ کتاب ان وڈیو لیکچرز کا مجموعہ ہے جو کہ سو ئیز لینڈ کے ایک بین الاقوامی سیمنار میں دیے اس میں 26 ادویات کو ایسے دلچسپ، سحر بیانی کے ساتھ پیش کیا گیا ہے کہ اس کا صحیح اندازہ تو آپ کو کتاب پڑھ کر ہی ہو گا۔
قارئین! یقیناًآپ کے پاس میٹریا میڈیکا کا وسیع ذخیرہ موجود ہو گا اور کچھ نہیں تو کینٹ، بورک اور نیش لیڈرز کو تو آپ نے ضرور پڑھا ہوگا ایسے میں آپ کے ذہن میں یہ سوال ضرور اٹھتا ہوگا کہ جب ہمارے پاس پہلے ہی سے میٹریا میڈیکا کا لٹریچرموجود ہے تو کیا اب اور کسی کتاب کی ہمیں ضرورت ہے۔۔۔؟ طالب علم کے لیے تو کتاب کی ہمیشہ ضرورت رہتی ہے۔۔۔۔ جب آپ وتھالکس کی ترجمہ کی ہوئی کتاب کا دل کی گہرائی سے مطالعہ کریں گے تو آپ کو اندر ایک نیا جنون اٹھے گا، ایک تمنا کہ مریض کی علامات کے ذریعے اس کی شخصیت پر مبنی پتھالوجی کا ہی علاج آپ نے نہیں کرنابلکہ اس کے ساتھ ساتھ اس کی خصلت اور شخصی خوبیوں کو مدنظر رکھ کر علاج کرنا ہے آپ کے اندر یہ جرات بھی پیدا ہو گی کہ جب علامات متفق ہوں تو مرض یا مزمن پتھالوجی کی تہوں میں لپٹا ہو، شدت کیسی ہی کیوں نہ ہو آپ اپنی دوا دیں۔ مسے (warts) دیکھ کر آپ کے اندر تھوجا دینے کا رحجان ٹوٹ جائے گا، دوا کلکیریا سمجھ آ رہی ہے، لیکن در حقیقت کلکیریا کے نیچے اصل دوا کوئی اور ہے۔ وتھالکس فکر کو پا جانے کے بعد آپ جان جائیں گے کہ دوا کے نیوکلیس تک پہنچنا ہی اصل فنکاری ہے۔ کئی ایک گمراہ کن خیالات کی بھی آپ اصلاح کر سکیں گے ، مثلاً ایکو نائٹ صرف حاد امراض کی دوا ہے حالانکہ اس کا جوہر متفق ہو تو یہ مزمن حالتوں کو بھی شفایاب کرتی ہے۔
ڈاکٹر ملک مسعود یحیی ایک نیک دل ، ایمان دار اور سادہ زندگی بسر کرنے والے ولی اﷲ انسان ہیں ان کے خاندان کے باقی افراد جن میں ان کی دختر وپسر شامل ہیں وہ بھی پڑھے لکھے ہومیو پیتھ ڈاکٹر ہیں۔ ہماری دوا ہے کہ دونوں ڈاکٹر صاحبان کا سایہ ہومیو پیتھی برادری پر قائم رہے اور صدقہ جاریہ کے جس کام کو انہوں نے شروع کر رکھا ہے وہ اسی طرح جاری رہے۔
مالک دو جہاں ان کی زندگی خاندان اور کام میں برکت عطا فرمائے۔ (آمین)

ڈاکٹر اعجاز علی (ہومیوپیتھ)
مری روڈ راولپنڈی 28اپریل2011
فون 0300-9736345

Posted in: Urdu
Return to Previous Page

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Theme Features

Welcome to the Zen Theme which is best used for personal blogging. Here is a list of some of the special features you will be able to take advantage of when customizing your website and blog:
  • Theme Control panel
  • Customize colours, layout, buttons, and more
  • Dynamic widgets with varied widths
  • Up to 8 Widget Positions
  • Built-in Social Networking
  • Google Fonts for Headings and site title
  • and a lot more...

Relax With Herbal Teas

When enjoying your moment of zen, it's best to enjoy fresh herbal teas for relaxation. Of course, choosing the right zen teas requires the expertise of asian herbalists.

Recent Posts

Check out the recent articles posted here at Zen and keep up to date with the latest news and information about having a zen lifestyle.