showcase demo picture

کتاب(ایک سرجن کا سفر)سے انتخاب(مرزا انور بیگ) (پارٹ ۔32)


متحرم قارئین،ہم آپ کی خدمت میں مشہور ہومیوپیتھک ڈاکٹرمرزا انور بیگ کی کتا ب سے اقتباسات پیش کرتے رہیں گے۔
امید ہے کہ آپ کو پسند آئے گا۔
کتاب(ایک سرجن کا سفر)سے انتخاب(مرزا انور بیگ)
(پارٹ ۔32)

اکیڈمی جس چاؤ سے بنائی تھی اس کامقصد یہی تھاکہ ہیلر پیدا ہو ں اس لئے نامور لوگوں کو مدعو کیا۔کچھ کو پروفیشنل طرز پر کچھ مروت ومحبت میں،ڈاکٹر ایل ایم خان صاحب کا بھی بڑا شہرہ تھا وہ کلکتے سے بمبئی بلوائے جاتے تھے ان کے سیمینار ہوا کرتے تھے۔اس لئے ایک سیمینار ہم نے بھی آ عرش اکیڈیمی کے زیر سایہ کروا دیا،ایل ایل خان صاحب کے لیکچر ہوئے۔
خان صاحب والگ صاحب کو ملنے گھر آئے۔کھانا ساتھ کھایا۔خان صاحب کی ایک خاص عادت،ان کا مشاہدہ بڑا تیز ہوتا تے۔باڈی لینگویج میں ماسٹری ہے۔والد صاحب تب تک بہت اچھے تھے۔اب یہ نظر لگی یا کہ کچھ اور تھا۔ان دنوں میں ہومیوپیتھی کو اتنی گیرائی سے نہیں جانتا تھا ہاں مگر اس کا بھوت سر پر ضرور سوار رہتا اس لئے اور خان صاحب اپنی عادت کے مطابق دوائیں تجویزکرتے ہوئے کسی کو کھاتے ہوئے دیکھا تو کسی کو سوتے۔کسی کی قمیض دیکھ کر تو کسی کے جوتے۔غرضیکہ ان کو ماسٹری ہے۔کئی ایک کو ٹھیک ہوتے ہوئے میں نے دیکھا۔والد صاحب کو کھاتے ہوئے ان کے کھانے کے انداز میں انہوں نے ان کے لئے SEPIAدوا تجویز کر دی کہ وہ سیپیا ہیں۔پوٹینسی چھ میں انہیں دو تین روز تک وہ دوا دینی تھی۔حالانکہ والد صاحب اس کے لئے قطی راضی نہ ہوئے کہ کیوں کھاؤں جب کوئی شکایت نہیں مگر میں نے انہیں ضد کر کے وہ دوا دے دی۔یہ سوچ کر کہ بڑھاپے میں ان کو توانائی ملے گی پس۔
بعد میں کیا ہوا یہ پوچھنے کی فرصت نہ تھی،والد صاحب کچھ روز کے بعد قبض کی شکایت کرتے رہے پھر انہوں نے اینیما لگانے کی ضد کی بعد میں نظر اتارنے کی بات کہی۔کچھ روز بعد انہیں بخار ہو گیا۔شاید یہ اس سیپیا کی پروونگ ہو رہی تھی جسے میں نے نہیں سمجھا،والد صاحب نظر سمجھ رہے تھے اور میں ان کا وہم۔دو ایک روز تک انہیں ملیریا کی طرز کا بخار آ گیا۔اب والد کا پارہ چڑھ گیا کہ مجھے فرصت نہیں یہاں آئے وہاں چل دیئے۔شاہدہ الگ بڑ بڑا ئی کہ میری ہومیوپیتھی ہر کسی پر لادی نہیں جا سکتی میں علامتوں پر غور کرتے والد صاحب کی دوا سوچتے رہا وہاں اب گھر کے سارے افراد میرے خالاف آرا تھے۔ اس لئے میں نے انہیں ایک فزیشن کو دکھایا جس نے انہیں اپنے نرسنگ ہوم میں داخل کرلیا۔ والد صاحب بہت خوش تھے کہ اب ان کا صحیح معنوں میں علاج ہو رہا ہے۔کچھ دنوں اسپتال میں رہ کر ان کا بخار تو ٹھیک ہو گیا
مگر نقاہت بد ستور طاری رہی۔وہ ذرا سا چلنے پر تھک جاتے تھے،ڈاکٹر کُلے نے بھی ان کو آ کر دیکھا۔ڈاکٹر مینن کو جب پتہ چلا وہ بھی آئے انہیں دیکھنے۔انہوں نے اپنے حساب سے جو دوائیں انہیں تجویز کی تھی ان سے کچھ خاص افاقہ تو نہیں ہوا البتہ یہ ضرور ہوا کہ تھوڑی بہت سوجن کم ہوئی۔ڈاکٹر مینن کے مطابق وہ پروسٹیٹ کے کینسر کے طرز کی کچھ بیماری ہو سکتی ہے کا شبہ کر رہے تھے۔بعد ازاں دوبارہ اسی نرسنگ ہوم،کہ جہاں ان کا بخار ٹھیک ہوا تھا،لے جایا گیا۔ اب جو جانچ ہوئی،ایکسرے وغیرہ نکالنے پر معلوم ہوا کہ ان کے غلاف میں پانی بھر چکا ہے۔میڈیکل کی اصطلاح میں اسے PERICARDIAL-EFFUSIONکہتے ہیں ۔اس وجہ سے ان کا دل اس پھرتی سے کام نہیں کر پاتا جس بناپر بدن میں پانی جمع ہو رہا تھا۔اب اس کی کیا وجہ ہو سکتی ہے؟کسی نے کہاٹی بی،کسی نے کہا کینسر،کسی نے ریومیٹرم۔
جاری ہے۔۔۔۔

Posted in: Urdu
Return to Previous Page

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Theme Features

Welcome to the Zen Theme which is best used for personal blogging. Here is a list of some of the special features you will be able to take advantage of when customizing your website and blog:
  • Theme Control panel
  • Customize colours, layout, buttons, and more
  • Dynamic widgets with varied widths
  • Up to 8 Widget Positions
  • Built-in Social Networking
  • Google Fonts for Headings and site title
  • and a lot more...

Relax With Herbal Teas

When enjoying your moment of zen, it's best to enjoy fresh herbal teas for relaxation. Of course, choosing the right zen teas requires the expertise of asian herbalists.

Recent Posts

Check out the recent articles posted here at Zen and keep up to date with the latest news and information about having a zen lifestyle.